قُرْآنُ الكَرِيمُ

قُرْآنُ الكَرِيمُ

بنجر و فنا ہے وہ مکاں سرا سر
آتی نہ ہو جہاں سے قُرآں کی سدا

ایماں سے بڑ کر نہیں  کوہی سرمایہٓ حیات
   ہے انکے در کے فقیر سب میر و گدا

یہ کس نے چھیڑا ہے میرا ذکر بندوں میں
رحمت سے بھری آسماں سے آئی ہے اک نِدا

ہے اتنی سی چاہ زیست میں مجھے الہٰی
  دیوانے بن کے ہوجاؤں میں نبیﷺ پہ فِدا

ہاتھوں کو پھیلایے جا وسیع اے شؔوکت
جو مانگنا ہے مانگ لے غنی ہے خدا

        ( ~ شوکت بڈھ نمبل کشمیری )