دُعا ُ ُ فروزاں کردے میرے دل میں ایماں کا چراغ ٗ ٗ

دُعا  ُ ُ فروزاں کردے میرے دل میں ایماں کا چراغ ٗ ٗ

فروزاں کردے میرے دل میں ایماں کا چراغ
کہ بھٹکی میری فکر کو سیدھی راہ ملے

گیرا ہے میری روح کو مرضوں نے اے خُدا
کھِل جائے میرا جسم و جاں ایسی شفا ملے

ستا یا جاتا ہوں کہیں  کیفیتوں سے اے خدا
حاصل ہو جس میں تسکینِ دل ایسی وفا ملے

چمکوں میں اے خُدا   روزِ روشن کی طرح
ایسی  مجھے کرم کی  تیری نگاہ ملے

مبادا اسیر ہوجاوں سرکشی کے زندان میں
کہ پھر نہ حشر میں مجھ کو کوئی سزا ملے

چھو نہ سکے کبھی بھی آتشِ دُوزخ
میرے وجودِ ناتواں کو ایسا قبا ملے

اے مالک ہمیں ‘ لا الہ’ کا پاسباں کردے
کہ مسلم کو بے محبابا ہر سو جگہ ملے

شِرک و کُفر کی آگ بُجھ  جائے جس سے چمن میں
توحید کے گلوں کو ایسی صبا ملے

فقط اتنی سی طلب ہے مجھے زیست میں
پیارے نَبّیﷺ کی چاہ ملے اور بے پناہ ملے

یہ دنیا سرائے ہے ٹھکانہ نہیں شؔوکت
کر جستجوِ عقبٰی کہ تُجھکو بقا ملے

    ( ~ شوکت بڈھ نمبل کشمیری)