ضربِ کلیم: خوار جہاں ميں کبھی ہو نہيں سکتی وہ قوم

ضربِ کلیم: خوار جہاں ميں کبھی ہو نہيں سکتی وہ قوم

خوار جہاں ميں کبھی ہو نہيں سکتی وہ قوم
عشق ہو جس کا جسور ، فقر ہو جس کا غيور

تشریح:
اقبال کہتے ہیں کہ وہ قوم، دنیا میں کبھی خوار نہیں ہو سکتی، جس کے عشق میں بہادری، اور فقر میں غیرت کا رنگ ہو۔ عشق سے مراد عشقِ رسول ﷺ ہے۔ اور فقر سے مراد ہی ذکر و فکر کا اختلاط ہے۔
(شرح یوسف سلیم چشتی)

Khawar Jahan Mein Kabhi Ho Nahin Sakti Woh Qoum
Ishq Ho Jis Ka Jasoor, Faqr Ho Jis Ka Ghayoor

That nation cannot come to shame at all, Nor shall eʹer come across or face disgrace,
Whose youth are blessed with pluck and courage great, and guard with zeal the prestige of their race.