ایک قطرہِ آنسوں کی قیمت

ایک قطرہِ آنسوں کی قیمت

ندائے کشمیر جلد نمبر 11 نمبر شمارہ 03 صفحہ نمبر 11 بتاریخ 16 جنوری تا 21 جنوری 2021

ایک قطرہِ آنسوں کی قیمت تحریر: شوکت بڈھ نمبل کشمیری

دنیاوی خواہشات کیلئے اپنے آنسوؤں کو اتنا مہنگا کردو کہ بڑی مشکل سے یہ آنکھوں سے نکل آئیں۔ لیکن آخرت کیلئے اتنا سستا بنا دو کہ خود بخود نکل آجائیں۔ آنسوں اللہ کی بڑی نعمتوں میں سے ہے اور دنیا کے تمام موتیوں سے افضل اور قیمتی۔ لہزا انہیں حقیر چیزوں پہ کبھی ضائع نہ کریں۔ اپنے آنسوؤں کو کبھی غیر کے آگے نہ گرنے دیں کیوں کہ ایسے میں اِن کی توحین ہوتی ہے۔غیر کے در پہ اگر آپ آنسوں بہائیں گے تو تمہیں کمزور اور حقیر سمجھیں گے اور بار بار ان سے کوئی مدد مانگنے بھکاری کہیں گے اور تمہیں بے بس سمجھ کر تمہارا استحصال کریں گے ۔ آنسوں ہمیشہ اللہ کے حضور بہائیں۔ اللہ کا در واحد در ہے جہاں میں ہاتھ پھیلانے والے کو اور بار بار مانگنے والے کو عزتوں اور رفعتوں سے سرفراز کیا جاتا ہے۔ اللہ پاک واحد شہنشاہ ہے جو مانگنے پر خوش اور نہ مانگنے پر خفا ہوتا ہے۔ اللہ کی بارگاہ وہ ہے جہاں جب کوئی جھک جاتا ہے تو اسے پھر دنیا کی کسی بھی درپہ جھکنے کی حاجت نہیں رہتی۔ اس لئے مومن کے آنسوں ہرگز غیر اللہ کے درپہ نہیں گرتے۔ بلا اسے کیسی بھی حالات آن پڑے۔ مومن کسی بھی چیز کیلئے عاجز نہیں ہوتا یے، چاہے اس پہ ظلم و ستم کے پہاڑ پڑجائے یا اور غربت کی زندگی دیکھنی پڑے۔ اگر چہ وہ وقتی طور دکھی اور رنجیدہ ہوجاتا ہے لیکن مایوس ہرگز نہیں۔ مومن کو صرف ایک چیز عاجز کرتی ہے اور وہ ہے صرف اللہ کی ناراضگی۔لیکن مومن اللہ کی بارگاہ میں سربسجود ہوکر اپنے آنسوؤں کے موتی بکھیر کر اپنے ربّ کو خوب مناتا ہے اور رحیم ربّ مومونوں کے آنسوؤں کو خوب قدر بخشتا ہے۔
تمہاری آنکھ سے اللہ کی یاد میں نکلا ایک آنسوں اتنا قیمتی ہے کہ جس کے طفیل جنت میں نور کے چشمے پھوٹ پڑتے ہیں ، فیوض کے نہریں جاری ہونے لگتی ہیں۔ اتنا ہی نہیں بلکہ تمہاری آنکھ سے اللہ کی یاد میں نکلا ایک آنسوں آتشِ دوزخ بجھا دیتا ہے۔
ایک حدیث میں ہے کہ اللہ کے نزدیک کوئی شے چیز قطروں سے زیادہ محبوب نہیں۔ ایک آنسوں کا قطرہ جو اللہ کے خوف سے نکلا ہو اور دوسرا خون کا وہ قطرہ جو اللہ کے راستے میں گرا ہو۔
مشکواة شریف
اسی وجہ سے مولانا رومیؒ فرماتے ہیں
قطرئہ اشکِ مدامت در سجود
ہمسری خون شہادت می نمود
تشریح۔۔۔ ندامت کے آنسوؤں کے وہ قطرے جو سجدہ میں گنہگاروں کی آنکھوں سے گرتے ہیں، اتنے قیمتی ہیں کہ اللہ تعالٰی کی رحمت ان کو شہیدوں کے خون کے برابر وزن کرتی ہے۔
رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا؛ کہ اللہ تعالٰی فرماتے ہیں کہ گنہگاروں کا رونا، آہ کرنا گڑگڑانا مجھے تسبیح پڑھنے والوں کی سبحان اللہ کی آواز سے زیادہ محبوب ہے۔ آنسوں بہانا قربِ الہٰی کا بڑا ذریعہ ہے۔
دارالعلوم دیوبند کے بانی مولانا محمد قاسم نانوتیؒ اللہ کے نزدیک بندوں کی ندامت اور آنسوؤں کے اس قدر اہم ہونے کی وجہ بیان کرتے ہوئے فرماتے ہیں کہ اللہ کی عظمت و جلالتِ شان کی جو بارگاہ ہے وہاں آنسوں نہیں ہے، اس لئے وہ ہمارے آنسوؤں کی بہت قدر کرتے ہیں کیوں کہ آنسوں تو گنہگار بندوں کے نکلتے ہیں، فرشتے رونا نہیں جانتے، کیوں کہ ان کو قربِ عبادت حاصل ہے، قربِ ندامت تو ہم گنہگاروں کو حاصل ہے۔
ظالم ابھی ہے فرصتِ توبہ نہ دیر کر
وہ بھی گرا نہیں جو گرا پھر سنبھل گیا
لہزا ان موتیوں کو سنبھال کر رکھا کریں اور اپنی آنکھوں میں چھپے اس خزانے سے محروم نہ ہو بلکہ اپنی آنکھوں کو ہمیشہ ان موتیوں سے تر رکھیں۔ تمہارے آنسوں صرف غم میں تمہارا ساتھ نہیں دیتے بلکہ جب آپ کی روح کو واقعی خوشی میسر ہوجاتی ہے یہ تب بھی آپ کے احساسات کی ترجمانی کرتے ہیں۔ لہزا اپنی آنکھوں کو ان سے خُشک ہونے نا دیں۔ آپ اپنے جسم کو جو اللہ پاک نے زمیں کی مٹی سے تخلیق فرمایا ہے ،کو زمیں پر میسر پانی سے دھو سکتے ہیں ۔لیکن آپ کی روح افلاکی ہے اسے دھونے کا ساماں آپ کے جسم سے باہر نہیں بلکہ اندرون میں ہے اور وہ ہے آپ کے آنسوں جسے آپ اپنے روح اور دل کو پاک کرسکتے ہیں۔

ڈاکٹر علامہ اقبال رحمت اللہ علیہ نے کیا خوب فرمایا ہے۔ قدرت نے نہ بخشا مجھے اندیشہُ چالاک
رکھتی ہے مگر طاقتِ پرواز میری خاک،
اس خاک کو اللہ نے بخشے ہیں وہ آنسو
کرتی ہے چمک جن کی ستاروں کو عرقناک

قانونِ فطرت ہے کہ جس شے کو بنانے میں جہاں سے اس کے اجزاء ملتے ہیں وہی سے اس کی مرمت کا ساماں بھی۔جسم کی نشونما کیلئے آپ زمیں میں میسر چیزوں کا استعمال کرتے ہیں جسے آپ خوراک کہتے ہیں لیکن روغ روح کی پرورش زمینی چیزوں سے نہیں ہوتی بلکہ روح کی پرورش فقط اللہ کی ذکر و یاد سے ہوتی ہے۔
اللہ پاک قرآن کریم میں فرماتے ہیں؛
ترجمہ؛ لوگ جو ایمان لائے اور ان کےدلوں کو اللہ کی یاد سے تسکین ہوتی ہے، خبردار اللہ کی یاد ہی سے دل تسکین پاتے ہیں۔
اللہ پاک سے دعا ہے کہ ہمیں اپنی ذکر و ثناء کرنے والوں میں شامل فرمائیں۔ ہمیں توبہ کرنے والوں میں کردے۔ ہمیں اللہ کی یاد میں آنسوں بہانے والا بنادے اور ہماری بخشش فرما دے۔

شوکت بڈھ نمبل کشمیری
Web: www.showkatbudnumbal.com

ایک قطرہِ آنسوں کی قیمت