مِلّت کے ساتھ رابطۂ ا ُستوار رکھ

مِلّت کے ساتھ رابطۂ ا ُستوار رکھ

شاخ بُريدہ سے سبق اندوز ہو کہ تو
نا آشنا ہے قاعدئہ روزگار سے

مِلّت کے ساتھ رابطۂ ا ُستوار رکھ
!پيوستہ رہ شجر سے ، اُميدِ بہار رکھ

Millat Ke Sath Rabta Ustawar Rakh
Pewasta Reh Shajar Se, Umeed-e-Bahar Rakh!

Keep very strong communication with the nation
Remain attached to the tree and have spring’s expectation!