بانگِ درا: جوابِ شکوہ : بند نمبر 5,6

شرح جوابِ شکوہ – بند 5 اور 6

آئی آواز’ غم انگيز ہے افسانہ ترا
اشک بے تاب سے لبريز ہے پيمانہ ترا
آسماں گير ہوا نعرئہ مستانہ ترا
کس قدر شوخ زباں ہے دل ديوانہ ترا

شکر شکوے کو کيا حسن ادا سے تو نے
ہم سخن کر ديا نبدوں کو خدا سے تو نے

ہم تو مائل بہ کرم ہيں’ کوئی سائل ہی نہيں
راہ دکھلائيں کسے’ رہر و منزل ہی نہيں
تربيت عام تو ہے’ جوہر قابل ہی نہيں
جس سے تعمير ہو آدم کی’ يہ وہ گل ہی نہيں

کوئی قابل ہو تو ہم شان کئی ديتے ہيں
ڈھونڈنے والوں کو دنيا بھی نئی ديتے ہيں

Here is the link to the full poem, Shikwah: https://goo.gl/a1qpmG

Stay tuned and do leave us your feedback.

If you like this initiative, let others know. If you think we can improve on something, let us know.

Regards,
Team IIS – International Iqbal Society