نعتِ شریف: بے مثل ہے کونین میں سرکار ﷺ کا چہرہ

نعتِ شریف: بے مثل ہے کونین میں سرکار ﷺ کا چہرہ

بے مثل ہے کونین میں سرکار ﷺ کا چہرہ
آئینہِ حق ہے شہہِ ابرار ﷺ کا چہرہ

دیکھیں تو دعا مانگیں یہی یوسفِ کنعاں
تکتا رہوں خالق ! ترے شہکار ﷺ کا چہرہ

خورشیدِ حلیمہ! تری مشتاق ہیں آنکھیں
بھاتا نہیں اب ماہِ ضیا بار ﷺ کا چہرہ

اے خُلد کروں گا ترا دیدار بھی لیکن
اِس دم ہے نظر میں تیرے مختار ﷺ کا چہرہ

جلوؤں سے ہو معمور کیوں نہ دل کا مدینہ
آنکھوں میں ہے اُس مطلعِ انوار ﷺ کا چہرہ

دورانِ شفاعت وہ سکوں بخش دِلا سے
بے فکرِ ندامت ہے گنہگار کا چہرہ

کِھلتا ہی گیا پھول کی صورت دمِ آخر
اُترا نہیں دیکھا ترے ﷺ بیمار کا چہرہ

پوچھا جو یہ سائل نے کہ کیا چیز ہے اَحسن
صدیق نے برجستہ کہا “یار ﷺ کا چہرہ”

جھپکے جو نصیر آنکھ دمِ نزع تو یا رب!
پُتلی میں پھرے احمدِ مختار ﷺ کا چہرہ

صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم


کلام: سید غلام نصیر الدین نصیر گیلانیؒ