KASHMIR DAY: کہ برد آں شور و مستي از سيہ چشمان کشميري

KASHMIR DAY:                     کہ برد آں شور و مستي از سيہ چشمان کشميري

میں نے صبح کے وقت (بصورت شعر) جو (پر سوز) گیت گائے، کوئی بھی ان کی طرف متوجہ نہ ہوا (یعنی میری شاعری ضائع کی گئی) تعجب اس پر ہے کہ سیاہ آنکھوں والے کشمیریوں سے (نعرہ ہائے مستانہ کا) شور اور گرم جزبوں کی مستی کس نے چھین لی؟

چہ بے پروا گذشتند از نواے صبحگاہ من
کہ برد آں شور و مستي از سيہ چشمان کشميري

How carelessly they passed by, with no ear to my lamentations,
The Kashmiri’s black eyes, so lacking in luster and life, who made them so dead and mute?