نعتِ رسولﷺ : ہنگامِ سحر مطلعِٕ انوار میں گم ھے

نعتِ رسولﷺ : ہنگامِ سحر مطلعِٕ انوار میں گم ھے

ہنگامِ سحر مطلعِٕ انوار میں گم ھے
خورشید ترے جلوۂِ رخسار میں گم ھے
انجم ہیں ترے نور ِ تبسم پہ نچھاور
مہتاب ترے حسن کے دیدار میں گم ہیں
کیا پنچۂ ِ قدرت نے سنوارے ہیں ترے بال
شب گیسوۓ واللیل کے اسرار میں گم ھے
صدیوں سےگلوں کا ھےوظیفہ تری خوشبو
جنت بھی ترےجسم کی مہکار میں گم ھے
اعجاز ِ سخن پر ہیں فدا اہل ِ فصاحت
ھر نطق تر ے حرفِ ضیا بار میں گم ھے
ھے محوِ طوافِ شہ ِ خوباں ، دلِ کعبہ
محرابِ حرم ، ابروۓ خمدار میں گم ھے
حیرت زدہ ھے ساعتِ اَسریٰ پہ زمانہ
صدیوں کا سفر اک دمِ رفتار میں گم ھے
ھر تخت ھے تیرے قدمِ ناز کا صدقہ
ہر تاجِ شہی ، شوکتِ پیزار میں گم ھے
ھر گوہرِ فطرت ھے تیرے نور سے تاباں
آفاق ترے قلزمِ اظہار میں گم ھے
کیا کہیئے ترے گلشن ِ معنیٰ کا تجمُّل
فردوسِ حِکم ، غنچۂ ِ گفتار میں گم ھے
اعلیٰ ھے زمانے میں ترا شہر ِ تمدُّن
ھر دور ترے دور کے معیار میں گم ھے
ہے مےِ نعت مرے جامِ سخن میں
آہنگ ِ غزل مستی ِ اشعار میں گم ھے