بانگِ درا: تر آنکھيں تو ہو جاتی ہيں، پر کيا لذت اس رونے میں

بانگِ درا: تر آنکھيں تو ہو جاتی ہيں، پر کيا لذت اس رونے میں

تر آنکھيں تو ہو جاتی ہيں، پر کيا لذت اس رونے میں
جب خونِ جگر کی آميزش سے اشک پيازی بن نہ سکا

بھلا اس رونے میں کیا لذت ہے جس سے صرف آنکھیں تر ہوجاتی ہیں، حقیقی رونا وہ ہے کہ جگر کا خون آنسوؤں میں مل کر انھیں پیازی رنگ کا بنا دے، یعنی ان میں سرخی پیدا کردے۔
غلام رسول مہر

Tar Ankhain To Ho Jati Hain, Kya Lazzat Iss Rone Mein
Jab Khoon-e-Jigar Ki Amaizish Se Ashak Piyazi Ban Na Saka

Though eyes become wet there is no pleasure is in this weeping
If by mixture of affliction’s blood tears pink could not be